سائبر کرائم بلیک میلنگ کے واقعات میں زبردست اضافہ،سوشل میڈیا بے قابو

اسلام آباد (جیٹی نیوز) وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) کے مطابق خواتین کی نازیبا تصاویر اور ویڈیوز کے ذریعے بلیک میلنگ کے واقعات میںاسلام آباد، لاہور،کراچی،گوجرانوالہ اور پشاور ایسے بڑے شہروں تشویشناک حد تک اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔ایف آئی اے کے اپنے جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق پاکستان کے تین بڑے شہروں کراچی، لاہور اور اسلام آباد میں گزشتہ برس اور رواں برس کے 4 ماہ میں مجموعی طور پر سائبر کرائم کے حوالے سے 95 مقدمات درج ہوئے جس میں سے 70 فیصد یعنی 67 مقدمات خواتین کی جانب سے بلیک میلنگ سے متعلق تھے۔

ان مقدمات میں درخواست کنندہ بھی متاثرہ خواتین تھیں۔اعداد و شمار کے مطابق مذکورہ عرصے میں کراچی میں مجموعی طور پر 39 مقدمات درج ہوئے ان میں 31 درخواستیںخواتین کو بلیک میلنگ سے متعلق تھیں۔ 8 بینک فراڈ، ہیکنگ، خفیہ پاس ورڈز کی چوری اور معصوم لوگوں کو کال کر کے لوٹنا اور دیگر مقدمات بھی شامل ہیں۔اسی طرح لاہور میں اسی عرصے میں 36 مقدمات درج ہوئے اور بلیک میلنگ کے 26 مقدمات تھے جب کہ اسلام آباد میں 28 مقدمات درج ہوئے جس میں 18 کا تعلق خواتین کو بلیک میلنگ سے تھا۔

ایف آئی اے کے مطابق پڑھی لکھی خواتین اپنی ذرا سی کوتاہی یا پھر اعتماد کے بل بوتے پر اپنی نازیبا تصاویر اور ویڈیو بناتی یا بنواتی ہیں اورپھر حالات بگڑنے پر پڑھے لکھے مرد وں سے خود ہی بلیک میل ہوتی ہیں ،بیشتر بدنامی کا خوف دل سے نکال کر ایف آئی اے کو درخواست دے دیتی ہیں اور ملوث مرد کو گرفتار کروا دیتی ہیں۔بیشتر مقدمات میں سابق اہلیہ مدعیہ بنتی ہیں ۔ان میں زیادہ تر مقدمات ابھی تک زیر التوا ہیں۔تحقیقاتی ادارے کا کہنا ہے کہ خواتین کو بلیک میلنگ میں اور کوئی نہیں بلکہ ان کے موجودہ اور سابقہ شوہر، منگیتر اور آفس کے مرد دوست شامل ہوتے ہیں۔

shame less women jtn2

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.