ماں نے بیٹیوں کا سودا کر لیا سب کچھ ہوتا دیکھتی رہی بیس سال قید

ماسکو(جیٹی نیوز)ایک سفاک روسی ماں کو مقامی عدالت نے بیس سال قید کی سزا سنائی ہے۔ خاتون پرالزام تھا کہ اس نے بچوں سے زیادتی کرنے والے گروہ کے ایک رکن کے ساتھ پیسوں کے عوض اپنی دو کم سن بیٹیوں کا سودا کیا ،پیشہ ور جنسی گروہ کے رکن نے اپنی کار کے اندر دونوں بچیوں کی ماں کے سامنے سات سالہ اور آٹھ سالہ بچیوں کو جنسی بداخلاقی کا نشانہ بنایا جس سے ان دونوں بچیوں کی حالت غیر ہو گئی۔

خاتون کیخلاف عدالت میں 2012 سے ٹرائل چل رہا تھا۔آخری پیشی پر عدالت نے حیرانگی کا اظہار کرتے اور ماں کے فعل کو انتہائی افسوسناک قراردیتے ہوئے کہا کہ حیرت ہے ایک ماںاپنی بچیوں کے ساتھ زیادتی کا عمل ہوتے ہوئے دیکھتی رہی کیونکہ اس نے اسی کی خاطرپیسے لئے تھے۔عدالت نے بچیوں کو زیادتی کا نشانہ بنانے والے مجرم کو بائیس سال قید کی سزا سنائی ہے ۔

ملزمہ نے اپنے صفائی میں کہا کہ اسے زندگی گزارنے اور اور دونوں بچیوں کی دیکھ بھال کی خاطر پیسوں کی ضرورت تھی اور اس کا واحد حل اس کی بیٹیاں ہی تھیں جن کا سودا اس نے جنسی استحصال کرنے والے پیشہ ورشخص سے کر لیا۔ خاتون نے تفتیش کے دوران یہ نہیں بتایا کہ اس نے مجرم سے کتنے پیسے وصول کئے تھے ۔ ملزمہ اس وقت 35 برس کی ہے اور عدالت نے اسے بیس سال قید کی سزا سنائی ہے ۔

جنسی اذیت کا شکار ہونے والی دونوں بچیوں نے بتایا کہ وہ کس طرح چیختی چلاتی گاڑی سے فرار ہونے میں کامیاب ہو گئیں کیونکہ مجرم کا ارادہ انہیں جان سے مارنے کا نہیں تھا اسلئے وہ بچ گئیں اور انہوں نے لوگوں کو اس خوفناک صورتحال کے بارے آگاہ کیا۔ واضح رہے کہ عدالت نے کیس کی سنگینی کے باعث سماعت بند کمرے میں کی۔

گواہوں اور ثبوتوں کی بنیاد پر عصمت دری کرنے اور کروانے پر ملزمان کو مجموعی طور پر44 سال قید کی سزا سنائی۔ ملزمان پر الزام عائد کیا گیا ہے کہ انہوں نے کم سن بچیوں کے ساتھ زیادتی کر کے ان کی شخصیت عام جسمانی ذہنی اور اخلاقی نشوونما کی خلاف ورزی کی ہے۔

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.